آپ باقاعدگی سے احکام شریعت کی پابندی کریں۔ پنجگانہ نماز ادا کریں، قرآن مجید کی تلاوت کثرت سے کریں۔ اس کے علاوہ ہر وقت اٹھتے بیٹھتے چلتے پھرتے حضور علیہ الصلاۃ والسلام پر درود وسلام پڑھیں۔ اپنے آپ کو زیادہ سے زیادہ اچھے کاموں میں مشغول رکھیں۔ آپ نے جو عمر بتائی اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ آپ طالب علم ہوں گے۔ لہذا کثرت کے ساتھ اپنی نصابی اور غیر نصابی کتب کا مطالعہ کریں۔ جب بھی فارغ ہوں کوئی نہ کوئی کتاب اسلامی، تاریخی یا اپنے سلیبس کی اٹھا کر اس کا مطالعہ کریں۔ جب غلط خیالات آئیں تو فوراً لا حول ولا قوة الا بالله اور أعوذ بالله من الشيطان الرجيم پڑھ کر کسی کام میں مشغول ہو جایا کریں۔

کوئی نہ کوئی گیم کریں، کرکٹ، ہاکی، فٹب ال یا جو اچھی گیم آپ کو پسند ہو۔ جتنا ہو سکے اپنے آپ کو مصروف رکھیں تاکہ آپ کو فارغ رہنے کا وقت ہی نہ ملے۔ کیونکہ انسان کو غلط خیالات اسی وقت آتے ہیں جب وہ فارغ ہوتا ہے، جب انسان کوئی کام نہیں کرتا تو شیطان آ کر ہر قسم کے وسوسے اس کے دل میں ڈالتا ہے، اس کا بہترین حل یہی ہے کہ آپ اپنے آپ کو مصروف رکھیں اور کبھی بھی فارغ نہ بیٹھیں۔

اللہ تعالی آپ کو اپنے حفظ وامان میں رکھے۔ آمین . نفس کو شریعت کا پابند ہو کر روکا جا سکتا ہے، روحانیت، تقویٰ و طہارت کے ذریعے روکا جا سکتا ہے۔ انسان کے اندر جتنا تقوی ہوگا۔ گناہوں سے دور رہے گا۔ فرائض میں کسی قسم کی کوتاہی نہیں کریگا۔ اوامر و نواہی پور عمل کرے گا۔ اگر انسان کو نفس اسے شہوت پر اکساتا ہے تو اس کا بہترین طریقہ نکاح ہے، حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا جس نے نکاح کیا اس نے اپنا ایمان مکمل کر لیا۔ لہذا انسان کو جلد از جلد نکاح کر لینا چاہیے۔ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا فرمان عالی شان ہے اے نوجوانو! اگر تم میں سے جو نکاح کی طاقت رکھتا ہو اسے چاہیے کہ فوراً نکاح کر لے۔ اور اگر کسی کو نکاح کی طاقت نہیں تو وہ روزے رکھے، کیونکہ روزہ انسان کی شہوت کو کم کرتا ہے۔

Share.